madrasa 30

بونیر: کوگا، مدرسہ تفہیم القران میں ختم القران کے سلسلے میں تقریب

عمران بونیری ریڈیو بونیر
تحصیل مندنڑ کے گاؤں کوگا کے مدر سہ تفہیم القران میں 34طلباء کی ختم القر ان کے سلسلے میں ایک تقر یب منعقد ہو ئی۔تقر یب کے مہمان خصوصی ڈاکٹر مولانہ عطاالرحمان تھے۔تقر یب میں مدر سہ کے مہتتم مولانہ زین الابرار،مولانہ قاضی حفظ الر حمان،جماعت اسلامی کے امیر محمد حنیف،سابقہ پی کے 22امیدوار راج ولی خان،مولانہ نورا الامین ،طلباء ،والدین اور عام لوگوں نے کثیر تعداد میں شر کت کی۔تقر یب میں مدرسہ کے طلباء نے نعت خوانی کر کے شر کاء سے داد وصول کی۔تقر یب میں سالانہ امتحانات میں فر سٹ ،سیکنڈ اور تھر ڈ آنے والے طلباء کو انعامات دئیے گئے جبکہ قر ان ختم کر نے والے طلباء کی دستار بندی کی گئی۔اس موقع پر والدین اور بچوں کی ر شتہ داروں نے اپنے اپنے بچوں کو ہار پہنائے ۔

تقر یب سے خطاب کر تے ہوئے مقررین نے مدارس کی اہمیت اور کردارپر تفصیلی روشنی ڈالی۔انہوں نے کہاکہ مدارس اسلام کے قلعے ہیں جو بچوں کو دینی علماء سے روشناس کراتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ مدارس عوام کے چندوں اور مخیر حضرات کے خیراتوں اور زکواتوں پر چل ر ہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ اللہ تعالی نے ہم پر فضل کیا ہے کہ ہم مسلمان پیدا ہو ئے ہیں لیکن اپنے بچوں کو دنیاوی علوم کیساتھ ساتھ دینی علوم سیکھانا ہم سب کی مشتر کہ ذمہ داری ہیں۔مقررین نے کہاکہ مدارس میں ہمارے بچوں کو قر ان و حدیث کی تعلیم دی جاتی ہے اورانہیں اخرت کے لئے تیار کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہاکہ اتنا علم ہر مسلمان مرد و عورت پر فر ض ہے کہ وہ اپنی چوبیس گھنٹے زندگئی اللہ کے احکامات اور محمد ؐ کے تعلیمات پر گزار سکے لیکن ان علوم کو سیکھنے کے لئے مدارس کی ضرورت ہیں جو کہ ہم آپ لوگوں کی تعاون سے چلا ر ہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ سیکولر قوتیں کبھی نہیں چاہتے کہ مدارس آباد اور فعال ہو۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کے علاوہ کسی بھی ملک میں مدارس کھولنے کی اجازت نہیں لیکن پاکستان میں مدارس و مساجد کھولنے کی اجازت ہیں ۔انہوں نے صاحب استطاعت لوگوں سے اپیل کی کہ وہ اپنے خیرات صدقات مدارس کو دے تا کہ مدارس آباد ہو اور ہمارے بچے دینی علوم حاصل کر سکے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں